menu close
    press releases
    February 24, 2020

    سندھ اینگرو کول مائننگ کمپنی اور آئی یو سی این کا تھر پارکر میں حیاتیات و نباتات کے تحفظ کیلئے سروے منعقد کرنے کا اعلان

    کراچی:سندھ اینگرو کول مائننگ کمپنی نے تھر فاؤنڈیشن اورفطرت کے تحفظ کی بین الاقوامی یونین، انٹرنیشنل یونین فار کنزرویشن آف نییچر(IUCN) کے تعاون سے تھر پارکر میں پہلے حیاتیاتی اور نباتیاتی سروے کروانے کا اعلان کیا ہے۔

    سروے میں حیاتیات اور نباتات کی موجودہ حالت کا جائزہ لینے کے ساتھ ساتھ ان کی موجودگی،تقسیم، کثرت، اقسام اور تحفظ کا بھی جائزہ لیا جائے گا۔اس سروے میں پرندوں، رینگنے والے اور جنگلی جانور،دودھ پلانے والے جانور،کیڑوں اور پودوں کو بھی شامل کیا جائے گا۔رپورٹ میں جمع کئے گئے اعداد وشماروائلڈ لائف ہاٹ اسپاٹ کی شناخت اورماحولیاتی طور رپر حساس علاقوں کی GISپر مبنی نقشہ سازی کا باعث بنے گا۔

    معاہدے پر دستخط کی تقریب میں IUCN،پلاننگ اور ڈیویلپمنٹ ڈپارٹمنٹ، سندھ وائلڈ لائف ڈپارٹمنٹ،سندھ اینگرو کو ل مائننگ کمپنی، تھر فاؤنڈیشن، تھر اور باہن بیلی کے نمائندوں نے شرکت کی۔

    اس موقع پرتقریب سے خطاب کرتے ہوئے سندھ اینگرو کول مائننگ کمپنی کے چیف ایکزیگٹیو آفیسرسید ابو الفضل رضوی نے اس سروے کی اہمیت کو اجاگر کیا اور اسے تھر پارکر میں ایس ای سی ایم سی اور آئی یو سی این کی شراکت داری سے تھر پارکر میں ماحولیات کے تحفط کا ذریعہ قرار دیا۔انہوں نے امید ظاہر کی کہ اس سروے میں موجو اعداد و شمارسے جانوروں اور پودوں کے تحفظ کیلئے خاطر خوا ہ مدد ملے گی۔

    اس موقع پر آئی یو سی این کے کنٹر ی ریپرنٹیٹیو محمود اختر چھیما نے تفصیلات سے آگاہ کرتے ہوئے بتایا کہ سروے میں حیاتیات اور نباتات کی موجودہ حالت کا جائزہ لینے کے ساتھ ساتھ ان کی موجودگی،تقسیم، کثرت، اقسام اور تحفظ کی باقاعدہ انوینٹری تیار کی جائے گی۔

    تقریب میں سندھ اسمبلی کے ممبر محمد قاسم سومرو نے سندھ اور خصوصی طور پر تھرپارکر کی ترقی میں اہم کردار اداکرنے والے اقدامات کی ضرورت پر روشنی ڈالی۔ انہوں نے تھر میں ایس ای سی ایم سی کے کردار کو سراہا اور کمپنی کو ہر طرح کے تعاون کی یقین دہانی کروائی۔

    اس موقع پر موجود سابق سینیٹر جاوید جبار نے کمپنی کے اس اقدام کی تعریف کی اور تھر پارکر کی معاشرتی ترقی کو اجاگر کیا جس نے ملک میں صوبائی و ثقافتی ہم آہنگی کو فروغ دینے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ انہوں نے علاقے میں حیاتیات و نباتات کے تحفظ کیلئے مقامی کمیونٹی کے لوک معلومات سے استفادہ کرنے پر بھی زور دیا۔

    معروف ماہرِماحولیات زیڈ بی مرزا نے اپنی پریزنٹیشن کے ذریعے واضح کیا کہ صحرا کے ماحولیاتی نظام میں رہائش گاہ اور زمینی پودے اور جانورانسانی بقاء کیلئے فوڈ سیکیورٹی کو یقنی بناتی ہے۔تھر پارکر کا ماحولیاتی نظام متعدد حیاتیاتی اور ثقافتی وسائل کا مسکن ہے جس میں مقامی اور بین الاقوامی براردی کیلئے خاطر خواہ تحفظ موجود ہے۔

    محکمہ وائلڈ لائف ڈپارٹمنٹ کے چیف کنزرویٹر جاوید مہر نے کہا کہ ا تنے بڑے پیمانے پرحیاتیات و نباتات کی آبادی اور اقسام کا اندازہ لگانے کیلئے بہترین طریقوں کو اپنانے کی ضرورت ہے۔

    For more information, please contact:

    George Sadiq | Programme Officer Education Communication and Outreach |
    Cell: 0303-3332127  | Email: george.sadiq@iucn.org

    Mohsin Babbar | Manager Communications & CSR | SECMC | Cell: +92-345-8213209 |
    Email: mbabbar@engro.com